تیری آنکھوں میں جلتے ہیں جتنے دیئے
ان کی لؤ میں چلو آج ہم جی لیئے


رنگوں کا سلسلہ ہے یہ رکتا نہیں
تیرے چہرے کے بن کہیں ٹکتا نہیں


تیری باتوں نے دل پہ ہے مرہم رکھی
تیرے ہاتھوں نے پس آج غم سے دیئے


تم کہو تو تمہیں بھی اڑا لائے گی
یہ ہوا اب تو چلتی ہے بس اسی لیئے


اس زمانے میں کسں نے قدر اپنی کی
جو نہیں ہے تمہیں تو گلا کیوں کریں

Advertisements